Main Menu

جھوٹا کہہ رہا ہے چھوٹا کس کو؟

آل راﺅنڈر شاہد آفریدی کی کتاب ” گیم چینجر “ کے حوالے سے تبصروں ، تجزیوں اور ردعمل کا سلسلہ جاری ہے۔

خاص طور کتاب میں شاہد آفریدی نے جس طرح جاوید میانداد جیسے لیجنڈ کے بارے میں چھوٹے جملے کہے اس پر زیادہ تر لوگوں کی جانب سے سخت ردعمل سامنے آیا ہے۔

خود جاوید میانداد نے اس معاملے کو خداپر چھوڑتے ہوئے زیادہ سخت لہجے میں جوابی حملہ نہ کرنے کا فیصلہ کیاہے۔

پاکستان کے کرکٹ کے معاملات پر گہری نگاہ رکھنے والے جانتے ہیں شاہد آفریدی کس طرح پی سی بی کے طویل المدتی ملازم سابق کرکٹر ہارون الرشید کی معاونت سے بین الاقوامی کرکٹ میں وارد ہوئے۔

جب حقیقت میں وہ چوبیس برس کے تھے ، تب وہ خود کو انیس برس سے کم عمر کا ظاہر کرکے پاکستان کرکٹ میں گھسے اور پھر لگ بھگ چوبیس برس پاکستان کرکٹ ، اس سے حاصل ہونے والی کمائی،شہرت اور اس سے جڑے دیگر فوائد سے لطف اٹھاتے رہے۔

خود ساختہ ”گیم چینجر “نے اپنا( عمر چھپانے کا) جھوٹ خود ہی بے نقاب کر کے لوگوں سے داد وصول کرنے کی کوشش ضرورکی لیکن انہیں یہ احساس شاید نہیں تھا کہ اس جھوٹ کے ظاہر ہونے سے پاکستان کرکٹ کی بڑی بدنامی کے ساتھ ساتھ انہیں بھی شرمندگی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

شاہد آفریدی اب اس بات کو جھٹلا نہیں سکتے کہ انہوں نے جھوٹ کی بنیاد پر کرکٹ کھیلی، اور کئی حقیقی انڈر نائن ٹین کھلاڑیوںکا حق مارتے ہوئے فوائد سمیٹے۔

اپنے فیورٹ سیاسی رہنما میاں نواز شریف کی طرح آفرید ی بھی اب صادق و امین نہیں رہے۔

ایک ہی صف میں کھڑے ہو گئے محمود و ایاز۔۔۔

تو کیا ایک جھوٹا شخص میانداد جیسے عظیم کھلاڑی کو چھوٹا کہنے کا حق رکھتا ہے؟لگتا ہے وجاہت سعید خان ( کتابکےلکھاری) نے آفریدی کے ساتھ ہاتھ کر دیا ہے۔

آفریدی کے جھوٹ کا پوسٹ مارٹم جیت پاکستان ڈاٹ کام جاری رکھے گا۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*