Main Menu

اوول کرکٹ گراﺅنڈ: قسمت پاکستان پر مہربان ہو سکتی ہے،عامر کے لیئے قرض چکانے کانادر موقع

پاکستان اور انگلستان کے درمیان چار میچوں کی سیریز کا آخر ی پانچ روزہ میچ گیارہ اگست (جمعرات)سے شروع ہو رہا ہے۔

پاکستان یہ میچ جیت کر سیریز دو، دو سے برابر کر سکتا ہے جس کے روشن امکانات اس لیئے ہیں کہ اوول گراﺅنڈ پاکستان ٹیم کے لیئے اکثر خوشیوں کا باعث بنا ہے۔

پاکستان نے اب تک اوول میں جو چار کامیابیاں حاصل کیں وہ تمام کی تمام گیند بازوں کی مرہون منت رہیں۔

یہاں ٹاس ہارکر پہلے گیند بازی کروانا پاکستان کو راس آتا ہے۔ پچھلی تین فتوحات میں بلکل ایسا ہی ہوا۔ ٹاس انگلستان جیتا، پہلے بلے بازی کی لیکن پاکستان تینوں میچ جیت گیا۔

دو ہزار دس سے دو ہزار پندرہ۔۔۔

دوسری طرف اس میدان پر گذشتہ چھ برس میں کھیلے گئے چھ ٹیسٹ میچوں میں انگلستان کو تین میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑاہے ۔اس میں وہ میچ بھی شامل ہے جو پاکستان نے اپنے پچھلے دورہ انگلستان(2010) میں چار وکٹوں سے جیتا تھا۔

اس میچ میں محمد عامر اور وہاب ریاض نے جاندار گیندیں کی تھیں۔ عامر میچ کے بہترین کھلاڑی قرار پائے تھے۔ میچ فکسنگ کی سزاکے بعد واپسی پر عامر پر جو عمدہ کارکردگی کاقرض ہے وہ چکانے کا شاید وقت آ گیا ہے۔

انگلستان نے پچھلے چھ میچوں میں سے جو دو کامیابیاں حاصل کی ہیں وہ دونوں بھارت کے خلاف تھیں۔ پاکستان کے علاوہ انگلستان کو ہرانے والوں میں آسٹریلیا اور جنوبی افریقہ شامل ہیں۔یہاں پچھلے چھ میں چار ٹیسٹ ایک اننگز کے مارجن سے جیتے گئے۔

دو ہزار گیارہ میں انگلستان نے بھارت کو ایک اننگز سے ہرایا۔

اگلے برس جنوبی افریقہ نے انگلستان کو اننگز سے شکست دی
دو ہزار تیراہ میں انگلستان اور آسٹریلیا کا میچ برابر رہا۔

اگلے برس انگلستان نے بھارت کے خلاف ایک اننگز سے کامیابی حاصل کی۔

دو ہزار پندرہ میں آسٹریلیا نے انگلستان کو اننگزسے شکست دی ۔

پاکستان ٹیم کا اوول کا سفر

انیس سو چون:ٹاس جیتا اور پہلے بلے بازی کی۔ پاکستان نے یہاں کھیلا گیا اپنا پہلا ٹیسٹ چوبیس دوڑوں سے جیتا ۔لو سکورننگ میچ میں تیزگیند بازفضل محمودمرحوم نے بارہ وکٹیں حاصل کر کے پاکستان کو ناممکن فتح دلوائی۔

انیس سو باسٹھ:ٹاس ہارا اور گیند بازی کی۔انگلستان جیتا دس وکٹوں سے۔

انیس سو سٹرسٹھ :ٹاس ہارا پہلے بلے بازی کی۔ انگلستان کامیاب رہا آٹھ وکٹوں سے۔

انیس سو چوہتر:ٹاس جیتا پہلے بلے بازی کی۔میچ ڈرا رہا۔ظہیر عباس نے 240 رنز کی باری کھیلی۔

انیس سو ستاسی:ٹاس جیتا اور پہلے بلے بازی کی۔ٹیسٹ ڈرا رہا ۔میانداد نے 260 رنز بناکر انگلستان کا سیریز برابر کرنے کا خواب چکنا چور کر دیا۔

انیس سو بانوے:ٹاس ہارا اور گیندبازی کروائی گئی۔میچ دس وکٹ سے جیتا۔وسیم اکرم عمدہ گیند بازی پرمین آف دی میچ۔

انیس سو چھیانوے:ٹاس ہارا اور پہلے گیند بازی کروائی گئی۔ٹیسٹ جیتانو وکٹ سے۔مشتاق احمد مین آف دی میچ
دو ہزار چھ میں:ٹاس جیتا اور گیند بازی کی۔انضمام الحق ٹیم کو باہر لے گئے تھے اورپھر واپس نہیں لائے ۔پاکستان میچ جیتنے کی پوزیشن میں تھا۔دو روز کا کھیل باقی تھا۔امپائرز نے میچ کا فیصلہ انگلستان کے حق میں دیا۔

دو ہزار دس: ٹاس ہارا اور گیند بازی کروائی گئی۔میچ چار وکٹوں سے جیتا۔محمد عامر مین آف دی میچ






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*