Main Menu

انڈر19عالمی کپ: میچ کھیلے بغیر پاکستان کی تیسری پوزیشن

پاکستان نے نیوزی لینڈ میں کھیلے جانے والے انڈر19عالمی کپ میں تیسری پوزیشن حاصل کر لی۔

جمعرات کو پاکستان اور افغانستان کے درمیان تیسری پوزیشن کے لیئے میچ بارش اور خراب موسم کے باعث کھیلا نہ جا سکا تاہم پاکستان کو اپنے گروپ ڈی کا فاتح ہونے کے باعث افغانستان پر برتری حاصل تھی جس کے باعث اسے تیسری پوزیشن کا حقدارقرار دیا گیا۔

یاد رہے کہ پاکستان، افغانستان کے خلاف اپنے گروپ کا میچ پانچ وکٹوں سے ہار گیا تھا جس کے بعد اس نے مسلسل تین میچ جیت کر سیمی فائنل کی راہ ہموار کی۔

افغانستان بھی پاکستان کے گروپ ڈی میں شامل تھا ۔ دونوںنے چار ، چار پوائنٹس حاصل کیئے تاہم پاکستان( بہتر رن ریٹ 1.4 کے ساتھ) گروپ کا فاتح رہا جبکہ افغانستان کا نیٹ رن ریٹ 0.3 تھا ۔

بہتر رن ریٹ کے اگر ایک طرف رکھ دیا جائے تو افغانستان کی ٹیم کی کارکردگی پاکستان کے مقابلے میں کافی بہتر رہی۔ بلے بازی کے شعبے میںپاکستان کے علی زریاب آصف پانچ میچوں کی چار باریوں میں(74 ناٹ آﺅٹ بہترین باری۔) 54.66 کی اوسط ،دو نصف سینچریوں کی مدد سے 164رنز بنانے میںکامیاب ہوئے۔

ان کے علاوہ روحیل نذیر ایک سو چالیس رنز اور کپتان حسن خان پانچ میچوں میں صرف اناسی رنز بنا پائے۔پاکستان کی جانب سے پانچ میچوںمیں صرف تین نصف سینچریاں سکور کی گئیں اور آٹھ چھکے لگائے جا سکے جبکہ اس کے پانچ بلے باز صفر پر آﺅٹ ہوئے۔

پاکستان کے تیز گیند بازشاہین آفریدی نے پاکستان کے لیئے سب سے زیادہ بارہ وکٹیں حاصل کیں۔پاکستان کا صرف ایک گیند باز میچ میں چار یا زائد وکٹیں لے پایا۔

دوسری جانب افغانستان کے چار بلے بازوں نے سو سے زیادہ رنز سکور کیئے۔ جبکہ ان کے بلے بازوں کی جانب سے نو نصف سینچریاں سکور کی گئیں ان کی جانب سے پانچ میچوں میں چوبیس چھکے لگائے گئے۔دلچسپ امر یہ ہے کہ ایک بھی افغانی بلے باز صفر پر آﺅٹ نہیں ہوا۔

اکرم علی خیل نے افغانستان کی جانب سے چار میچوں میں سب سے زیادہ ایک سو پچاسی رنز بنائے۔گیند بازوں میںقیس احمد نے پانچ میچوں میں چودہ وکٹیں حاصل کیں۔افغانی گیند بازوں نے میچ میں چار یا زائد وکٹیں تین بار حاصل کیں۔
ریکارڈ کے لحاظ سے تو تیسری پوزیشن کی حقدار افغانی ٹیم تھی لیکن نیٹ رن ریٹ کی برتری نے پاکستان کو افغانستان پر حاوی کر دیا۔

فائنل آسٹریلیا اور بھارت کے درمیان ہفتے کو کھیلا جا رہا ہے۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*