Main Menu

پاکستان سپر لیگ سوئم: قلندروں سے فتح پھر روٹھ گئی

پہلی فتح کی متلاشی لاہور قلندر ، اسلام آباد کے خلاف پی ایس ایل کے اہم مقابلے میں صرف ایک رنز کی کمی کے باعث ایک سو بائیس رنز کا ہدف پانے میں ناکام رہنے کے بعد سپر اوور میں مقابلہ ہار گئی ۔

یہ اسلام آباد کی موجودہ سپر لیگ میں دوسری فتح جبکہ قلندروں کی چار میچوں میں چوتھی شکست ہے۔

لاہورقلندر پچھلے دو سیزن میں پانچ ٹیموں میں آخری درجہ پر رہی تھی اور اس بار بھی اس کے آخری پوزیشن سے اوپر اٹھنے کے امکانات معدوم دکھائی دیتے ہیں۔

جمعہ کو شارجہ میں کھیلے گئے اس مقابلے میں قلندر پہلی بار میچ کے لیئے حقیقی طور پر لڑتے نظر آئے لیکن قسمت نے ان کی یاوری نہ کی۔

اسلا م آباد کو20اوورز میں121 پر محدود کرنے کے بعد اس نے بارہویں اوورز میں دو وکٹوں پر ستتر رنز بنا لیئے تھے لیکن آغا سلمان(48) کی وکٹ گرنے کے بعد میچ گرگٹ کی طر ح رنگ بدلنے لگا۔کبھی پلڑا اسلام آباد کا بھاری اور کبھی فتح قلندروں کی جھولی میں گرتی نظر آنے لگی۔

جب مک کولم (34)کی وکٹ گری تو میچ تقریباََ ختم ہو گیا تھا لیکن دسویں نمبر کے بلے باز ارشاد نے سمیع کو میچ کے آخری اوور کی دوسری گیند پر چھکا جڑ کے میچ برابر کر دیا۔

قلندروں کو جیت کے لیئے آخری تین گیند وں پر صرف ایک رنز درکار تھا مگر ان کے آخری بلے باز سلمان ارشادنے سنگل لینے کی بجائے بڑی ہٹ مارنے کی کوشش کی اور وکٹ گنوا دی جس سے مقابلہ ٹائیڈ ہو گیا۔

بعدازاں میچ کا فیصلہ سپر اوور میں ہوا۔

سپر اوور میں قلندروں نے جیت کے لیئے سولہ رنز کا ہدف دیا جسے اسلام آباد نے سپر اوورکی آخری گیند پر آندرے رسل کے لگائے ہوئے چھکے کی بدولت پورا کر لیا۔

عمدہ گیند بازی کرنے والے محمد سمیع میچ کے بہترین کھلاڑی قرار پائے۔

لاہور قلندر کے مالک رانا فواد بیشتر وقت مضطرب نظر آئے، جب میچ کا پلڑا ان کی طرف جھکتا تو ان کا چہرہ کھل جاتا۔

دوسری جانب اسلام آباد کے کپتان مصباح کے چہرے پر بھی فکر مند کی آثار واضح طور پر پڑے جا سکتے تھے تاہم وہ اپنی ٹیم کو لڑانے میں کامیاب رہے۔

میچ میں کافی اتار چڑھاﺅ آئے۔ دنوں ٹیموں کے کھلاڑی جان مارتے نظر آئے جیسے یہ سپر لیگ کا فائنل ہو۔

آندرے رسل کے آخری بال پر چھکے نے رانا فواد اور ان کے ٹیم کے پہلی جیت حاصل کرنے کے ارمان روند ڈالے۔

جاندار کرکٹ اور پل پل بدلتے حالات کے باعث اسلام آباد اور لاہو رکا یہ مقابلہ اب تک پی ایس ایل کا بہترین میچ قرار دیا جا سکتا ہے۔

چار میچوں میں چار شکستوں کے بعد واضح ہو گیا ہے کہ لاہور قلندر کا مسلہ کپتانی کا بھی ہے اور ٹیم انتظامیہ کی جانب سے میچ کے لیئے جاندار منصوبہ بندی کا فقدان بھی دکھائی دیتا ہے ۔

ہیڈ کوچ عاقب جاوید کے پاس قلندروں کے گرد چنی ہوئی شکستوں کی دیوار گرانے کا فی الحال کوئی منصوبہ دکھائی نہیں دیتا۔

مک کولم بحثیت کپتان اور بلے باز پہلے سیزن میں بھی ناکام رہے اور حالیہ سیزن میں بھی انہوںنے دو مناسب باریاں ضرور کھیلیں لیکن وہ ایک فتح گر کھلاڑی اور لڑانے والے کپتان کے طور پر سامنے نہ آ سکے۔

جمعہ کو ہی سپر لیگ کے سلسلے میں ملتان سلطان اور کراچی کنگز کے درمیان طے شدہ میچ بارش کے باعث نہ کھیلا جا سکے جس کے باعث دنوں ٹیموں کو ایک ایک پوائنٹ عطا کر دیا گیا۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*