Main Menu

کرکٹ ڈپلومیسی کے ذریعے پاک بھارت کرکٹ سیریز بحال ہونی چاہئے:عاقب جاوید

پاکستان سپر لیگ اور انڈین پریمئر لیگ سے 2,2 ٹیمیں لے کر نئی لیگ کروانے سے کرکٹ کو فروغ ملے گا، عمر اکمل کا براوقت چل رہا ہے ، ہیڈکوچ لاہور قلندر کی جیت پاکستان کے ایڈیٹر اشفاق مغل سے دبئی میں خصوصی بات چیت۔

لاہور قلندر کے ہیڈ کوچ عاقب جاوید نے کرکٹ ڈپلومیسی کے ذریعے پاکستان اور انڈین لیگ ٹیموں پر مشتمل کرکٹ لیگ منعقد کروانے کی تجویز دے دی ، لاہور قلندر میں کھلاڑیوں کی کارکردگی اہمیت کی حامل ہے کسی کے انفرادی اعمال کوئی معنی نہیں رکھتے۔

ڈاون ٹاون ہوٹل میں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے 92ورلڈ کپ کے ہیروعاقب جاوید کا کہنا تھا کہ کرکٹ ڈپلومیسی کے ذریعے پاکستان سپرلیگ اور انڈین پریمئر لیگ کی 2,2 بہترین ٹیموں پر مشتمل ایک کرکٹ لیگ کروائی جائے جس کے میچز پاکستان اور بھارت میں ہوں تو ہر میچ کے دوران سٹیڈیم کرکٹ شائقین سے بھراملے گااور کرکٹ کی پرموشن الگ سے ہوگی ۔

انہوں نے کہاکہ انڈین کرکٹ بورڈ کو چاہئے کہ وہ اپنے ایسے کھلاڑیوں کو پاکستان سپر لیگ کھیلنے کی اجازت ضرور دے جو انڈین کرکٹ ٹیم یا انڈین پریمئرلیگ کے ریڈار میں نہیں ۔ ایسے کھلاڑیوں کی شمولیت سے بھی کرکٹ شائقین کی دلچسپی میں اضافہ ہوگا۔

عثمان قادر کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں عاقب جاوید کا کہنا تھالاہور قلندر کا کام نوجوان کھلاڑیوں کو پلیٹ فارم مہیا کرنا ہے عثمان قادرخاصے مایوس ہوچکے تھے لیکن لاہور قلندر نے انہیں امید دی ایک پلیٹ فارم دیا جہاں وہ اپنی کارکردگی کے بل بوتے پر ٹیم میں جگہ بناسکتے تھے لیکن بدقسمتی سے وہ ایسا نہ کرسکا ۔ لاہور قلندر نے عثمان قادر کو دو مرتبہ ٹیم کا کپتان بناکر آسٹریلیا بھیجا لیکن وہاں بھی غیرمعمولی کارکردگی کا مظاہرہ نہ ہوسکا تاہم ابھی بھی عثمان قادر کے پاس پلیٹ فارم موجود ہے لیکن اسے ٹیم میں جگہ بنانے کے لئے خود کو یاسر شاہ سے بہتر لیگ سپنر ثابت کرنا ہوگا۔

لاہور قلندر کی کارکردگی کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں لاہور قلندر کے ہیڈ کوچ عاقب جاوید کا کہنا تھاکہ عام لوگوں کو شاید یہ معلوم نہیں کہ پی ایس ایل میں کھلاڑیوں کا چناو ایک مشکل کام ہے جس کے لئے اگر 6 کھلاڑی ایک کیٹیگری کے ہیں تو جس کی آخری باری ہوگی اس کے پاس اس کیٹیگری کا سب سے آخری کھلاڑی ہی میسر آتا ہے اور اگر کوئی ٹاپ رینکنگ کھلاڑی مل جائے لیکن وہ کھیل سے پہلے ہی ان فٹ ہوجائے یا اسے کسی مجبوری میں اپنے گھر واپس جانا پڑے تو محدود کھلاڑیوں کے ساتھ ہی میدان میں اترنا پڑتا ہے ۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*

Warning: Use of undefined constant WP_PB_URL_AUTHOR - assumed 'WP_PB_URL_AUTHOR' (this will throw an Error in a future version of PHP) in /customers/b/5/3/jeetpakistan.com/httpd.www/wp-content/plugins/adsense-box/includes/widget.php on line 164 Warning: Use of undefined constant WP_PB_URL_AUTHOR - assumed 'WP_PB_URL_AUTHOR' (this will throw an Error in a future version of PHP) in /customers/b/5/3/jeetpakistan.com/httpd.www/wp-content/plugins/adsense-box/includes/widget.php on line 164 Warning: Use of undefined constant WP_PB_URL_AUTHOR - assumed 'WP_PB_URL_AUTHOR' (this will throw an Error in a future version of PHP) in /customers/b/5/3/jeetpakistan.com/httpd.www/wp-content/plugins/adsense-box/includes/widget.php on line 164