Main Menu

سونا لینے نکلے تھے تانبا بھی نہ ملا انہیں

یکم ستمبر پاکستانی ہاکی ٹیم کے لیئے ستم گر ثابت ہوا۔ہمارے شاہین جکارتہ میں سونا لینے نکلے تھے ،تانبا بھی نہ ملاانہیں۔جاپان کے ہاتھوں سیمی فائنل میں ایک صفر کی ناکامی کے بعد آٹھ بار کا ایشیائی کھیلوں کا ہاکی چیمپئن پاکستان ، بھارت کے خلاف ہفتہ کو انڈونیشیا میں کھیلا گیا کانسی کے تمغے کا میچ دو ایک سے ہار گیا۔

یہ دوسرا موقع ہے کہ پاکستان ایشیائی کھیلوںکے ہاکی مقابلوں میں کانسی کا تمغہ جیتنے میں بھی ناکام رہا۔ آخری بار قوم کو یہ صدمہ دو ہزار دو کے ایشیائی کھیلوںمیں برداشت کرنا پڑا۔

ہالینڈ سے خریدی گئے مشہور غیر ملکی کوچ کی زیرنگرانی قومی ہاکی ٹیم نے ان مقابلوں میں کمزو ر ٹیموں کے خلاف گولوں کی بہار سجائی تاہم جب دو برابر کی ٹیموں کے خلاف فیصلہ کن معرکوں کے لیئے میدان میںنکلی تو گول کرنا ہی بھول گئی۔

سیمی فائنل اور تیسری پوزیشن کے میچ میں صرف ایک گول بنا پائی جب کہ اس کے خلاف تین گول سکور ہوئے۔ حیران کن امر یہ بھی ہے کہ لگاتار پینلٹی کارنر زپر گول داغنے والے ہمارے دفاعی کھلاڑی سیمی فائنل اور تیسری پوزیشن کے مقابلوں میںچھ پینلٹی کارنر پر ایک بھی گول نہ بنا پائے۔

کامن ویلتھ گیمز( آٹھ ٹیموں میں ساتویں پوزیشن)، چیمپئنز ٹرافی(چھ ٹیموں میں آخری پوزیشن) کے بعد اب ایشیائی کھیلوںمیں غیر ملکی کوچ کی زیر نگرانی قومی ٹیم کارکردگی ایک برے تسلسل کی نشاندہی کر رہی ہے۔

اس ہار پر پی ایچ ایف اور ٹیم انتظامیہ کوکوئی بہانہ نہیں تراشنا چاہیے۔ ایشین گیمز سے پہلے کھلاڑیوں اور آفیشلز کو ان کے واجبات اد کر دیئے گئے تھے۔ غیر ملکی کوچ کو اپنی پچھلی ناکامیوں کے داغ کو دھونے کا موقع دیا گیا تھا۔

ایک غلطی شاید یہ بھی ہوئی کہ سیکرٹیری ہاکی فیڈریشن شہباز سنیئر نے بجائے ٹیم کی تربیت کرنے کے پی ایچ ایف کے انتظامی امور سنبھالنے کو ترجیح دی ۔ کیا ہی بہتر ہوتا کہ وہ کوچنگ کی طرف نکلتے اور جیسے وہ اپنے دور کے دنیا کے بہترین کھلاڑی بننے اسی طرح ایک بہترین، جدید اور فاتح کوچ کے طور پر ہاکی کے میدانوں کا رخ کرتے اور پی ایچ ایف کی غیر ملکی کوچوں کو بھاری معاوضہ پرملازم رکھنے سے جان چھوٹ جاتی۔

دیکھا گیا ہے کہ پی ایچ ایف فنڈز کی کمی کا رونا روتی رہتی ہے ۔ فنڈز جو ملتے ہیں انہیں نہ جانے کہاں صرف کرتی ہے۔ سارا دن دفتروں میں بیٹھ کر گپ شپ کرنے کی بجائے اگر فنانسرز اور سپانسرز تلاش کرنے کو ایماندارانہ کوششیں کی جاتی تو کچھ نہ کچھ تو ہاتھ لگ جاناتھا۔ سب کچھ تھالی میں رکھ کر دینے سے حالات نہیں بدلیں گے۔

ایک ہاکی کا کیا رونا کہ مجموعی طور پر بھی پاکستان کے ایتھلیٹس ان کھیلوں میں صرف چار تمغے جیت پائے اور وہ بھی تمام کانسی کے۔ سینتیس ممالک نے تمغے جیتے ان میں پاکستان کا چونتیسواں نمبر رہا۔

ایک طرف کھیل بیساکھیوں پر آ گئے ہیں لیکن اس حوالے سے نومنتخب وزیراعظم عمران خان نے ابھی تکایک سطری بیان بھی نہیں دیا۔ گراﺅنڈ بنانے کی بات ضرور ہوئی لیکن کھیلوں کے زوال کو روکنے کے حوالے سے قوم ان کے وژن کے سامنے آنے کا انتظار کر رہی ہے۔کوئی سپورٹس پالیسی نہیں۔

ادھر دنیا کہاں سے کہاں پہنچ گئی۔جاپان ہاکی کا نیا ایشیائی ( ایشیائی کھیلوں میں) چیمپئن بن گیا۔ فائنل میں اس نے ملایشیا کو ایک دلچسپ مقابلے کے بعد، جس میں مقررہ وقت میں دونوں ٹیموں نے چھ، چھ گول بنائے ، پینلٹی سٹروکس پر تین، ایک سے شکست دی۔

تیسری پوزیشن کے میچ میں بھارت نے پاکستان کے خلاف دو ، ایک سے کامیابی حاصل کر کے کانسی کا تمغہ جیتا۔ خواتین کے ایونٹ میں جاپان نے بھارت کو ہرا کر چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔ دلچسپ امریہ ہے کہ جاپان مردوں اور خواتین کے ایونٹ میں پہلی بار چیمپئن بنا ہے۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*

Warning: Use of undefined constant WP_PB_URL_AUTHOR - assumed 'WP_PB_URL_AUTHOR' (this will throw an Error in a future version of PHP) in /customers/b/5/3/jeetpakistan.com/httpd.www/wp-content/plugins/adsense-box/includes/widget.php on line 164 Warning: Use of undefined constant WP_PB_URL_AUTHOR - assumed 'WP_PB_URL_AUTHOR' (this will throw an Error in a future version of PHP) in /customers/b/5/3/jeetpakistan.com/httpd.www/wp-content/plugins/adsense-box/includes/widget.php on line 164 Warning: Use of undefined constant WP_PB_URL_AUTHOR - assumed 'WP_PB_URL_AUTHOR' (this will throw an Error in a future version of PHP) in /customers/b/5/3/jeetpakistan.com/httpd.www/wp-content/plugins/adsense-box/includes/widget.php on line 164